18 August, 2015 22:52

NADEEM MALIK LIVE

samaa.tv/nadeemmaliklive/

18-AUGUST-2015

لوگ کہتے ہیں کہ پارٹی بڑے مشکل وقت سے گزر رہی ہےمیں شاید واحد سیاست دان ہوں کہ جس نے انیس سال جدوجہد کی ہے۔ آج کے واحد مہمان عمران خان کی ندیم ملک لائیو میں گفتگو

کے پی کے میں بلدیاتی الیکشن میں پی ٹی آئی نے سب جماعتوں کو شکست دی ہے۔

جن سیٹوں پر شکایات تھیں کہ دھاندلی ہوئی وہاں دوبارہ الیکشن ہوا تو پی ٹی آئی نے پہلے تیس فیصد کی بجائے پینتالیس فیصد ووٹ حاصل کئیے۔

پی ٹی آئی میں جو کشمکش چل رہی ہے وہ چلنی ہے جب پارٹی بڑھ رہی ہوتی ہے تو ایسا ہوتا ہے۔

پی ٹی آئی پاکستان کی پہلی جمہوری پارٹی ہے باقی سب خاندانی جماعتیں ہیں۔

ہماری جماعت میں ہر کوئی اپنی بات کہہ سکتا ہے۔

جنرل مشرف صدر اور آرمی چیف آئی ایس آئی جس کے نیچے تھی اس کے لئیے اسلام آباد میں تیس ہزار بندے اکٹھے نہیں کر سکی۔

آئی ایس آئی پی ٹی آئی کے لاہور مینار پاکستان پر جلسے کے لئیے ساڑھے تین چار لاکھ بندے کیسے اکٹھے کر سکتی ہے۔

نواز شریف خود فوج اور جنرل جیلانی اور ضیاؤالحق کی گود میں پلے ہیں جنرل درانی ڈی جی آئی ایس آئی کہتے ہیں کہ انہوں نے نواز اور شہباز شریف کو آئی جے آئی بنانے کے لئیے پیسے دئیے۔

اگر میں نواز شریف کی جگہ ہوتا اور کوئی جنرل میری حکومت گرانے کی کوشش کرتا تو یا میں خود حکومت چھوڑ دیتا یا انہیں پکڑ کر سزایں دیتا۔

یہ غداری ہے کہ آپ کسی سے پیسے لے رہے ہیں اور ایک منتخب جمہوری حکومت کو گرانے کی کوشش کر رہے ہیں۔

میں چیلنج کرتا ہوں کوئی جنرل ظہیر کی ٹیپ دکھا دے یا ثابت کر دے کہ پی ٹی آئی یا عمران خان نے آئی ایس آئی سے ایک روپیہ بھی لیا ہو۔

پاکستان میں تفتیش ہو جائے تو بڑے بڑے سیاست دانوں کا نام آئے گا کہ جنہوں نے پیسہ لیا ہوا ہے۔

میں جب پارلیمان میں جاؤں گا تو سب سے پہلے انکوائری کمشن بنانے کا مطالبہ کروں گا کہ جس نے بھی آئی ایس آئی سے پیسے لئیے ہیں ان کو ظاہر کریں۔

میری جنرل ظہیر سے دھرنے کے دوران کوئی بات نہیں ہوئی ایک دو بار دہشت گردی کے مسئلے پر ملاقات ہوئی تھی ملاقات ہوئی تھی۔

جنرل راحیل سے میری ملاقات اس وقت ہوئی جب نواز شریف نے انہیں ثالث کا کردار ادا کرنے کے لئیے کہا۔

جنرل راحیل نے کہا تھا کہ وہ وزیراعظم کا ستعفی نہیں دلوا سکتے لیکن دھاندلی کی تحقیقات کروا دیں گے۔

میں نے جنرل راحیل سے کہا کہ جن لوگوں کو دھاندلی سے فائدہ پہنچا ہے وہ کیسے دھاندلی کی تحقیقات کروایں گے۔

میں نے صرف چار حلقے کھولنے کے لئیے کہا تھا اگر یہ کھول دیتے تو میں دھرنا نہیں دیتا۔

وقت بتائے گا کہ جیوڈیشل کمشن پی ٹی آئی کی ہار تھا یا نہیں۔

ہری پور میں مسلم لیگ ن کا امیدوار اس لئیے جیت گیا کیونکہ اس نے وہاں کام بہت کئیے تھے۔

مسلم لیگ ن کے امیدوار کے اپنے خاندان کے ہی بہت زیادہ ووٹ تھے۔

مسلم لیگ ن کے امیدوار نے پچھلے الیکشن میں آزاد حیثیت میں مسلم لیگ ن کے امیدوار کو ہرا دیا تھا۔

بلدیاتی الیکشن میں پی ٹی آئی نے ہری پور میں کلین سویپ کیا تھا۔

ریحام خان کی ایک بات مجھے بہت پسند ہے کہ اس کی ہر چیز پرایک رائے ہوتی ہے اور وہ ایک سیاسی عورت ہے۔

پی ٹی آئی میں عمران خان کے کسی رشتہ دار یا کسی بھی آدمی کو پارٹی الیکشن جیت کر آگے آنا ہو گا۔

کراچی کے حلقہ دو سو چھیالیس میں میری ریلی اور پی ٹی آئی کے امیدوارعمران اسماعیل پر حملے کئیے گئے۔

کراچی سے خوف کی فضا ختم کر دیں پھر دیکھیں کہ پی ٹی آئی کیسے اپنی جگہ بناتی ہے۔

ایم کیو ایم کو اب فیصلہ کرنا ہو گا کہ ڈنڈے کی سیاست کرنی ہے یا جمہوری سیاست کرنی ہے۔

ایم کیو ایم کے بہت سے لوگ ہم سے رابطے میں ہیں لیکن میں ان کے نام نہیں بتاؤں گا۔

ایم کیو ایم میں بہت پڑھے لکھے اور مڈل کلاس لوگ موجود ہیں وہ خود بھی خوف کی سیاست سے تنگ آ چکے ہیں۔

میں نے ساری زندگی جدو جہد کی ہے مجھے گر کر اٹھنا آتا ہے پی ٹی آئی جتنی آج مقبول ہے اس س ے پہلے کبھی نہ تھی۔

میں نے جیوڈیشل کمشن کے فیصلے کے مطابق الیکشن کمشن سے چالیس سوالات کے جوابات مانگے ہیں۔

میں جاوید ہاشمی کو کچھ نہیں کہنا چاہتا وہ ہر میٹنگ میں ہوتے تھے میں کہتا تھا کہ اگر انصاف نہیں ملا تو سڑکوں پر نکلیں گے۔

جیوڈیشل کمشن کے فیصلے کے مطابق ڈھائی کروڑ ووٹ کا کوئی ریکارڈ موجود نہیں ہے۔

ہم اپنی پارٹی میں الیکشن کروایں گے اور جو غلطیاں پہلے کی تھیں اب نہیں کریں گے۔

آج بجلی کی قیمت پیپلز پارٹی کے دور سے دوگنی ہیں بجلی پٹرول سے بنتی ہے اور پٹرول کی قیمتیں آدھی ہو چکی ہیں۔

پاکستان اس لئیے بنا تھا کہ یہ ایک انقلابی اور اسلامی رفاحی ریاست ہو گا۔

قصور کے جنسی زیادتی کے واقع کو رانا ثنا اللہ نے زمین کے جھگڑے کا واقع قرار دیا تھا۔

فیصل آباد میں رانا ثنا اللہ کے بندے نے پی ٹی آئی کے کارکن کو سامنے کھڑے ہو کر گولی ماری تھی۔

مجھے شجاع خانزادہ کی شہادت پر بہت تکلیف ہوئی ہے ان کی شخصیت بہت معتبر تھی۔

لوگوں کو راحیل شریف پر اس لئیے اعتماد ہے کہ وہ سمجھتے ہیں کہ وہ جو کہے گا وہ کرے گا۔

آرمی پبلک سکول کے واقع کے بعد پوری قوم متحد ہے اور مجھے اب امید کی ایک کرن دکھائی دے رہی ہے۔