23 February, 2015 21:43

NADEEM MALIK LIVE

samaa.tv/nadeemmaliklive/

23-FEB-2015

میں نے اپنے لیڈر کو مشکل سے بچانے کے لئیے خود بلاول سے نہ ملنے کا فیصلہ کیا ہے۔ زوالفقار مرزا کی ندیم ملک لائیو میں گفتگو

اب وہ مرحلہ آ گیا ہے کہ بلاول کو پیپلز پارٹی اور اپنے والد میں سے کسی ایک کا انتخاب کرنا پڑے گا۔ زوالفقار مرزا

آصف زرداری پیپلز پارٹی کو ایم کیو ایم کے ساتھ مل کر چلانا چاہتے ہیں جبکہ میں پارٹی کو ایم کیو ایم کی گود سے نکالنا چاہتا ہوں۔ زوالفقار مرزا

مجھے آصف زرداری سے کوئی خطرہ نہیں ہے ہم دونوں نے ایک دوسے کی طاقت کو آزمایا ہوا ہے۔ زوالفقار مرزا

میں حالات اور واقعات کے تناظر میں رحمان ملک اور بابر اعوان پر بینظیر بھٹو کی شہادت کا الزام لگاتا ہوں۔ زوالفقار مرزا

رحمان ملک اور بابر اعوان محترمہ بینظیر بھٹو کی گاڑی کے پیچھے تھے ان کی شہادت ہوئی تو بھاگ کر زرداری ہاؤس جا کر ٹھہرے۔ زوالفقار مرزا

رحمان ملک اور بابر اعوان سے بی بی کی شاہدت پر پوچھ گچھ ہونی چاہئیے۔ زوالفقار مرزا

بینظیر بھٹو بہت بڑی اور عالمی لیڈر تھیں ان کی شہادت ہونا بہت افسوسناک ہے۔ طارق عظیم

کسی مرنے والے کی آٹاپسی کرنے کے لئے پولیس کو اس کے بھائی یا کسی رشتہ دار سے اجازت لینے کی ضرورت نہیں ہوتی۔ زوالفقار مرزا

مجھے افسوس ہے کہ نواز شریف اور عمران خان نے رحمان ملک جیسے چور کو اپنا ثالث مان لیا ہے۔ زوالفقار مرزا

پیپلز پارٹی، سندھ حکومت چلانے والا اور ہر کام کرنے والا صرف ایک شخص ہے جس کا نام ہے زرداری۔ زوالفقار مرزا

مجھے پیپلز پارٹی سے ان لوگوں نے نکالا ہے جن کی پارٹی سے وابستگی اور قربانیاں مجھ سے بہت زیادہ کم ہیں۔ زوالفقار مرزا

مرزا صاحب کا اپنا ایک مزاج ہے ان کے الزامات کا پیپلز پارٹی کی قیادت جواب دے چکی ہے۔ قمر زمان کائرہ

یہ بات درست ہے کہ پیپلز پارٹی میں بہت زیادہ بہتری لانے کی گنجائش موجود ہے۔ کائرہ

سندھ میں سیلاب آیا تو بہت سے لوگوں نے مال بھی بنایا اور کرپشن بھی کی۔ زوالفقار مرزا

ساری جماعتیں متفق ہوں تو سینٹ الیکشن میں ہارس ٹریڈنگ پر آئینی ترمیم لائی جا سکتی ہے۔ طارق عظیم

پاکستان میں یہ افسوسناک حقیقت ہے کہ سینٹ الیکشن کے موقع پر پیسہ چلتا ہے۔ کائرہ

فوجی عدالتوں کا بل قومی اسمبلی اور سینٹ سے ایک دن میں پاس ہوا تھا تو ہارس ٹریڈنگ کا بھی ہو سکتا ہے۔ کائرہ

تما سیاسی جماعتوں کے سربراہوں سے آئین میں بائیسویں ترمیم پر رائے لی جائے سب متفق ہوں تو ترمیم کر دی جائے۔ کائرہ

سندھ کے شہری علاقعوں سے پیپلز پارٹی اس لئیے ختم ہوئی کیونکہ اس نے ایم کیو ایم کو وہاں فری ہینڈ دے دیا ہوا ہے۔ زوالفقار مرزا

نبیل گبول کا ایم کیو ایم میں جانا ان کا زاتی فیصلہ ہے۔ زوالفقار مرزا

نبیل گبول ایم کیو ایم میں اپنی سیٹ کے لئیے گئے تھے جو ان کا مل گئی۔ کائرہ

پیپلز پارٹی کی قیادت لوگوں کو بلا بلا کر کہہ رہی ہے کہ زوالفقار مرزا کے خلاف بولو۔ زوالفقار مرزا

لوگوں کو دھمکایا جا رہا ہے کہ زوالفقار مرزا کو چھوڑ دو اور فریال تالپور کے پاس جاؤ۔ زوالفقار مرزا

پیپلز پارٹی کو ایم کیو ایم کو ساتھ لے کر چلنے اور مسلم لیگ ن کی حمایت کرنے کا نقصان ہوا لیکن میں پارٹی فیصلے کو مانتا ہوں۔ کائرہ

میری جماعت کو چاہئیے کہ کچھ احساس کرے اور لوگوں کی بہتری کے لئیے کچھ کرے۔ زوالفقار مرزا